بدھ 29 نومبر 2023
16  جُمادى الأولى 1445ھ
Pak Recorderads
نیوز الرٹ :

شاہین شاہ آفریدی

شاہین شاہ آفریدی

فوری حقائق:


یوم پیدائش: 6 اپریل 2000
عمر: 21 سال
پیدائش: خیبر ایجنسی، فاٹا
وجہ شہرت: کرکٹر (بولنگ)
قد: "66 (198 سینٹی میٹر)
جنوری 2022 تک کھیلے گئے میچوں کی تفصیل:
ٹیسٹ میچ:  21ٹیسٹ میچ ، 86 وکٹیں 
ون ڈے میچ:  28 ون ڈے میچ ، 53 وکٹیں 
ٹی ٹونٹی  میچ: 39 میچ ، 45 وکٹیں 

تفصیلى تعارف:

شاہین شاه آفریدی ایک پاکستانی کرکٹر ہیں جو بائیں ہاتھ کے تیز گیند باز کے طور پر کھیلتے ہیں۔ اُن کا تعلق پاکستان کے شمال مغربی علاقے میں واقع ایک چھوٹے سے قصبے لنڈی کوتل سے ہے۔ خاندان کے سات بھائیوں میں سب سے چھوٹے شاہین نے ڈومیسٹک میچوں اور ایک بین الاقوامی ٹیسٹ میچ میں کھیلنے والے اپنے بڑے بھائى ریاض آفریدى سے متاثر ہو کر کرکٹ کى دنیا میں قدم رکھا۔ شاہین نے اپنے بین الاقوامی کرکٹ کیریئر کا آغاز 2016 کے ایشیا کپ کے لیے پاکستانی انڈر 19 اسکواڈ سے کیا اور شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔ وہ ایک ہونہار نوجوان کھلاڑی ہیں اور پاکستانی قومی اسکواڈ کا حصہ ہیں۔

ابتدائی زندگی:

شاہین آفریدی 6 اپریل 2000 کو پیدا ہوئے۔ ان کا تعلق زخہ خیل قبیلے سے ہے۔ وہ لنڈی کوتل کے نام سے مشہور ایک چھوٹے سے قصبے میں ایک نچلے متوسط گھرانے میں پلے بڑھے۔ وہ سات بھائیوں میں سب سے چھوٹے ہیں۔ ان کے سب سے بڑے بھائی ریاض آفریدی کافی عرصے سے کرکٹ کھیل رہے تھے تاہم وہ اس میں خاطر خواہ کامیابی نہ حاصل کر سکے۔
شاہین تعلیمی لحاظ سے کمزور تھے اور اپنا زیادہ تر وقت کرکٹ کے لیے وقف کرتے تھے۔
انہوں نے پشاور منتقل ہونے اور پیشہ ورانہ سطح پر اپنی صلاحیتوں کو نکھارنے کے لیے کرکٹ اکیڈمی میں شامل ہونے کا فیصلہ کیا۔ وہاں وہ ایک فاسٹ باؤلر کے طور پر مختلف کلبوں کے لیے کھیلے۔

کیرئیر:

شاہین آفریدی کا پیشہ ورانہ کرکٹ اور ہارڈ بال کے ساتھ پہلا دور تھا جب سال 2015 میں فاٹا انڈر 16 ٹرائلز میں ان کے بھائی نے انہیں حقیقی کرکٹ گیند سے متعارف کرایا۔ شاہین اس وقت تک صرف ٹینس بال سے کھیلے تھے۔ 2015 کے دورہ آسٹریلیا میں اپنے ملک کی انڈر-16 ٹیم کے لیے کھیلنے کے لیے منتخب ہونے کے بعد انھیں کیریئر کی پہلی بڑی کامیابی ملی۔ انہوں نے اپنی ٹیم کو 2-1 سے فتح دلانے میں اہم کردار ادا کیا۔ یہی کارکردگی انہیں قومی انڈر 19 ٹیم میں جگہ دلانے کے لیے کافی معاون ثابت ہوئی۔
دسمبر 2016 میں انہیں انڈر 19 ایشیا کپ میں کھیلنے کا موقع ملا۔ ٹورنامنٹ میں اپنے پہلے میچ میں سنگاپور کے خلاف انہوں نے 27 رنز کے عوض تین وکٹیں حاصل کیں جس کے بعد انہوں نے بین الاقوامی اور مقامی میڈیا کی توجہ حاصل کی۔
لاہور کی ’نیشنل کرکٹ اکیڈمی‘ کے ہیڈ کوچ مشتاق احمد شاہین کی کارکردگی سے بے حد متاثر ہوئے اور انہوں نے شاہین کی بولنگ کی کچھ ویڈیوز سری لنکن ماسٹر کرکٹر کمار سنگاکارا کو بھیجیں ننہوں نے شاہین کو BPL میں Dhaka Dynamites کى ٹیم میں شامل کر لیا۔
انہوں نے 2017-18 کی قائد اعظم ٹرافی میں خان ریسرچ لیبارٹریز کے لیے فرسٹ کلاس کرکٹ کھیلى۔ شاندار کارکردگی کے بعد شاہین قومی انڈر 19 ٹیم میں جگہ حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئے۔ شاہین انڈر 19 ورلڈ کپ میں پاکستانی عوام کی توقعات پر پورا اترے اور پورے ٹورنامنٹ میں 12 وکٹیں لے کر وہ پاکستان کے لیے سب سے زیادہ وکٹیں لینے والے بولر کے طور پر ابھرے۔

ذاتی زندگی:

شاہین آفریدی اپنے بھائی ریاض آفریدی کے بہت بڑے مداح ہیں جنہوں نے 2004 میں پاکستان کے لیے ایک دوستانہ ٹیسٹ میچ کھیلا تھا۔ ان کی منگنی سٹار کرکٹر شاہد آفریدی کی بڑی بیٹی سے ہو چکی ہے۔